حمزہ علی عباسی کی سابقہ بیوی ہونے کی دعویدار خاتون نے ان کی دلہن پر غیر اخلاقی الزام لگادیا

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) معروف اداکار حمزہ علی عباسی اور نیمل خاور کی چند ہفتے قبل شادی ہوئی۔ ایک طرف تو انتہائی سادگی کے ساتھ شادی کرنے کی وجہ سے اس جوڑے کا سوشل میڈیا پر بہت چرچا ہوا اوردوسرے ایک اور خاتون کے حمزہ علی عباسی کی بیوی ہونے کا دعویٰ سامنے آ گیا جس کے باعث حمزہ اور نیمل کی شادی آج تک انٹرنیٹ پر موضوع بحث بنی ہوئی ہے۔ اب حمزہ علی عباسی کی اس پہلی مبینہ بیوی نے حمزہ اور نیمل پر ایک اور شرمناک الزام عائد کر دیا ہے۔ ویب سائٹ ’پڑھ لو‘ کے مطابق انیلہ وریامنی نامی اس خاتون نے اپنے انسٹاگرام اکاﺅنٹ پر کہا ہے کہ نیمل شادی سے پہلے ہی حاملہ تھی۔ یہی وجہ ہے کہ انہوں نے اتنی جلد بازی میں شادی کی۔

انیلہ نے انسٹاگرام پر حمزہ اور نیمل کی ہنی مون کی ایک تصویر پوسٹ کی جس میں نیمل نے ایک شال اوڑھ رکھی ہوتی ہے، جس میں سے اس کا پیٹ بظاہر بڑھا ہوا لگ رہا ہوتا ہے۔ پوسٹ میں انیلہ لکھتی ہے کہ ”میں حیران تھی کہ نیمل نے شادی کے روز اپنی ماں کا لباس کیوں پہنا تھا۔ اب معلوم ہوا کہ وہ شادی سے پہلے ہی حاملہ ہو چکی تھی اور اپنا بڑھا ہوا پیٹ چھپانا چاہتی تھی، جس کے لیے اس نے اپنی ماں کا لباس پہنا۔ اس جوڑے کے ہاں جلد بچہ پیدا ہونے والا ہے جو کہتا ہے کہ انہوں نے شادی سے پہلے ایک دوسرے کو چھوا تک نہیں۔“

یہی تصویر دوبارہ پوسٹ کرتے ہوئے انیلہ وریامنی نے لکھا کہ ”نوبیاہتا جوڑا اپنے ہنی مون پر۔ بیگم صاحبہ کا پیٹ قدرے بڑھا ہوا نظر آ رہا ہے۔ شاید انہیں قبض کی شکایت ہے یا وہ حاملہ ہیں اور ہماری توقع سے کہیں جلد ماں بننے والی ہیں۔ بظاہر لگتا ہے کہ خاتون شادی سے پہلے ہی حاملہ تھیں۔ اب یہاں یہ دلچسپ بات ہے کہ خاتون حاملہ ہو تواسلام میں اس کا نکاح ہو ہی نہیں سکتا۔“رپورٹ کے مطابق حمزہ علی عباسی اور نیمل خاور ہنی مون پر ہیں اور تاحال اس الزام پر ان کا کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں